بین الاقوامیقومی

امراض گردہ سے آگاہی کا عالمی دن آج منایا جا رہا ہے

پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج گردوں کے امراض سے آگاہی کا دن منایا جا رہا ہے۔ ایس آئی یو ٹی (SIUT) کراچی میں زیر علاج بچہ گردہ تبدیلی کا منتظر ہے جسے اس کے والد کا گردہ لگایا جائے گا۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ پاکستان میں بعد از مرگ اعضاء عطیہ کرنے کا رواج بہت کم ہے۔
چمکتے دمکتے معصوم چہرے جن کی عمر ہسنے کھیلنے اور شرارتیں کرنے کی ہیں وہ گردے فیل ہونے کے باعث زندگی کے خوبصورت پل اسپتال میں گزارنے پر مجبور ہیں۔ ایس آئی یو ٹی کراچی میں زیر علاج کوئیٹہ کی پانچ سالہ معصوم بچی مریم بھی گردوں کی تبدیلی کے لئے کسی محسن کی منتظر ہے۔
پندرہ برس کا افرا سیاب کا تعلق لکی مروت سے ہے. افرا سیاب خوش نصیب ہے کہ اس کے والد کا گردہ اس سے میچ کر گیا. وہ پر امید ہے کہ گردے کی پیوندکاری کے بعد وہ جلد نارمل زندگی گزارنے شروع کرے گا. پاکستانی قانون کے مطابق مریض کو کوئی رشتہ دار ہی اعضاء عطیہ کر سکتا ہے۔ تاہم بعد از مرگ کسی کو گردہ عطیہ کیا جا سکتا ہے جس کا رواج بہت کم ہے.
پاکستان میں گردوں کے امراض کی بڑی وجہ آلودہ پانی کا استعمال، زہنی دباو، شوگر اور سیلف میڈیکیشن ہے. پاکستان میں گردوں کے مریضوں کی تعداد لاکھوں میں ہے جس میں عدم احتیاط کے باعث ہر سال 34 ہزار افرد کا اضافہ بھی ہو رہا ہے.

Comment here

Subscribers
Followers