انٹرٹینمنٹقومی

اسلام آباد میں ثقافتی سفارتکاری کے عنوان سے تقریب کا انعقاد

خطے میں امن کیلئے ثقافتی سفارتکاری کی اہمیت کے عنوان سے اسلام آباد میں تقریب کا انعقاد کیا گیا۔ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان میں تاریخی مقامات خطے میں اہمیت کے حامل ہیں۔ ثقافتی سفارتکاری کو فروغ دیتے ہوئے کرتار پور راہداری منصوبے پر کام جاری ہے۔
اسلام آباد کے نیشنل لائیبریری میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ ہمارے معاشرے مین انتہا پسندی کو شامل کر دیا گیا، جس سے ملک پر منفی اثرات مرتب ہوئے. ہمارا ملک ثقافتی اور تاریخی ورثہ کا گڑھ ہے۔ امید ہے کرتاپور راہداری سے پاک بھارت تعلقات میں بہتری آئے گی.
ڈی جی پی این سی اے جمال شاہ نے کہا کہ پاکستان قدرتی حسن سے مالا مال ہے۔ ہڑپہ سے لے کر سوات اور تخت بائی کے کھنڈرات پاکستان میں ہیں۔ سکھ مذہب، بدھ مت اور ہندو مت کی قدیم عبادت گاہیں پاکستان کو ورثے میں ملی ہیں۔ اس قیمتی ورثے سے فائدہ اٹھانے کی ضرورت ہے.
تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ثقافتی مشیر برائے ایشئین امیج ڈاکٹر عکسی مفتی نے کہا کہ ہمارے ثقافتی ساز دم توڑ چکے ہیں۔ ثقافتی کھانے بھی اب نئی نسل کے علم میں نہیں رہے۔
ثقافتی سفارتکاری پر زور دیتے ہوئے مقررین نے کہا کہ ثقافتی ورثہ ہی ماضی کو مستقبل میں منتقل کرنے کا راستہ ہے اور اسی راستے پر چل کر خطے میں امن کو یقینی بنایا جا سکتا ہے۔

Comment here

Subscribers
Followers