بین الاقوامیٹیکنالوجی

سائنسدانوں نے تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے دل تیار کر لیا

سائنسدانوں نے تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے دل بنانے میں کامیابی حاصل کر لی. دل بنانے کے لیے انسانی ٹشوز اور خون کی شریانوں سے خلیات حاصل کیے گئے. تھری ڈی پرنٹر سے انسانی دل بنانے کا کامیاب تجربہ اسرائیلی سائنسدانوں نے تل ابیب یونیورسٹی میں سر انجام دیا۔ اگرچہ اس دل کا حجم ایک چیری جتنا ہے اور یہ خون پمپ نہیں کرسکتا مگر یہ بہت اہم طبی پیشرفت ہے۔ یہ دل مسل کی طرح سکڑ سکتا ہے مگر یہ مکمل پمپ کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتا۔
اس مصنوعی دل کے ٹیسٹ ایک سال تک شروع ہونے کا امکان ہے. سائنسدان اگلے مرحلے میں تھری ڈی پرنٹڈ دل کو انسانی دل کی طرح دھڑکنا سکھائیں گے، جس کے بعد ان کا ٹرانسپلانٹ جانوروں میں کیا جائے گا۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ابھی اصل چیلنج خلیات کی مدد سے مکمل انسانی دل بنانا ہے۔ تھری ڈی تکنیک کی بدولت مستقبل میں دل کے مریض اپنے جسم کے ری سائیکل خلیات سے نیا دل بنوا سکیں گے، جسے ان کے جسم کی جانب سے مسترد کرنے کا خطرہ بھی بہت کم ہو گا.

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers