قومی

نارووال میں گرو نانک حویلی پر غلط خبر، سکھ رہنماؤں کی مذمت

پاکستان کے معروف انگریزی اخبار کی نارووال میں ایک قدیم حویلی کو سکھ مذہب کے بانی بابا گرو نانک کے محل سے منسوب کرنے کی خبر غلط نکلی. سکھ مذہبی رہنماؤں نے نانک حویلی کی تردید کرتے ہوئے غلط خبر چھاپنے کی مذمت کی ہے اور اسے کرتار پور راہداری منصوبے کے خلاف سازش قرار دیا ہے. دوسری جانب بھارتی حکومت نے بھی غلط خبر پر خوب پروپیگینڈہ کیا۔
پاکستان کے ایک انگریزی اخبار نے ستائیس مئی کو ایک خبر چھاپی تھی کہ نارووال سے بیس کلومیٹر دور باٹھاوالہ گاوں میں واقع ایک قدیم حویلی سکھ مذہب کے بانی بابا گرو نانک کا محل تھی. خبر کے مطابق حکومت پاکستان کی جانب سے تاریخی ورثے کو نظر انداز کرنے کے باعث اس کی حالت خستہ ہو چکی ہے. اس پر قابض لوگ توڑ پھوڑ کر کے اس کا ملبہ فروخت کر رہے ہیں.
بھارتی حکومت اور میڈیا نے اس خبر کو پاکستان کے خلاف سکھوں کے جذبات ابھارنے کے لئے خوب مرچ مصالحے لگا کر پیش کیا۔ لیکن، بھارتی اخبار انڈیا ٹوڈے نے بھی اپنی تحقیقات میں پاکستانی اخبار کی خبر کو غلط قرار دیا ہے. خبر شائع ہونے پر پاکستان میں سکھ رہنما اور رکن پنجاب اسمبلی مہندر پال سنگھ نے ویڈیو بیان میں اس کی سخت الفاظ میں تردید کی. پاکستان سکھ گوردوارہ پر بندھک کمیٹی کے سابق صدر بشن سنگھ نے حویلی کو بابا گرو نانک سے منسوب کرنے کو کرتارپور راہداری منصوبے کے خلاف سازش قرار دیا۔
ڈی سی ناروال نے قدیم حویلی کو سیل کر کے پولیس کو حویلی پر قابض رانجھا برادران کے خلاف مقدمہ درج کرنے کی ہدایت کی ہے. انہوں نے ضلع کونسل کو عمارت کو محکہ آثار قدیمہ کی تحویل میں دینے کی درخواست بھی کی ہے.

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers