بزنسبین الاقوامی

ساؤتھ افریقہ میں گیم فارمننگ کا کاروبار عروج پر پہنچ گیا

ساؤتھ افریقہ میں گیم فارمننگ کا کاروبار عروج پر پہنچ گیا. دنیا بھر سے شکاری ہزاروں ڈالر خرچ کر کے شکار کھیلنے کے لئے ساؤتھ افریقہ کا رخ کرتے ہیں. شکار کے لئے فارموں پر جنگلی جانور پالنے کی صنعت سالانہ ڈیڑھ ارب ڈالر کا کاروبار کر رہی ہے. بادشاہوں کا شوق بھی اب بزنس کی شکل اختیار کر گیا. ساؤتھ افریقہ دنیا بھر کے شکاریوں کے لیے جنت سے کم نہیں۔
جنوبی افریقا میں جانوروں کی پرورش کے لیے دس ہزار (10,000) سے زائد فارمز قائم ہیں. پرورش کے بعد جانوروں کو پیسے لے کر شکار کے لیے پیش کیا جاتا ہے. ایک اندازے کے مطابق سالانہ آٹھ ہزار چھ سو (8,600) سے زائد شکاری جنوبی افریقہ کا رخ کرتے ہیں. مصنوعی شکار گاہوں میں نہ صرف شکار کرایا جاتا ہے بلکہ سیاح جنگل کے ماحول سے بھی لطف اندوز ہوتے ہیں۔
امریکہ سے آئے ایک شکاری کا کہنا ہے کہ اُس نے گولڈن وائلڈ بیسٹ کا شکار کرنے کے لیے فارم مالک کو پاکستانی دس لاکھ روپے ادا کیے ہیں. ہر جانور کا ریٹ مختلف ہوتا ہے۔
گیم فارم میں مختلف اقسام کے جانور پالے جاتے ہیں. شکار کیے گئے جانوروں کا گوشت بھی مارکیٹ میں فروخت کیا جاتا ہے۔ گیم فارمنگ سے منسلک افراد کا کہنا ہے کہ گیم فارمنگ سے جنگلی جانوروں کی نسلی افزائش ہوتی ہے اور جانور غیر قانونی شکاریوں اور سمگلرز سے بھی محفوظ رہتے ہیں۔

Comment here

Subscribers
Followers