انٹرٹینمنٹقومی

محسن عباس کی اہلیہ کی جانب سے تشدد کے الزامات کی تردید

محسن عباس کی اہلیہ کی جانب سے تشدد کے الزامات کی تردید، بولے اہلیہ کی جانب سے شئیر کی گئی تصاویر گزشتہ برس کی ہیں جب سیڑھیوں سے پھسل کر انہیں چوٹ لگی تھی- فاطمہ ویمن کارڈ کھیلنے کی کوشش کر رہی ہیں اگر ان کے پاس ثبوت ہیں تو سامنے لائیں-

اپنے اوپر الزامات لگنے سے متعلق لاہور پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے اداکار محسن عباس کا کہنا تھا کہ میں ایسے گھرانے سے تعلق رکھتا ہوں جہاں خواتین کی عزت کی جاتی ہے۔ مجھے میری ماں، بہنوں اور خالہ نے پالا ہے مگر میں نے آج تک تو کبھی ان پر ہاتھ نہیں اٹھایا-

انہوں نے اہلیہ کی جانب سے اپنے اوپر لگے الزامات سے متعلق کہا کہ شادی کے چند ماہ بعد ہی ہم دونوں کو احساس ہوگیا تھا کہ یہ شادی نہیں ہونی چاہیے تھی، شادی کے چند روز بعد ہی ان کے جھوٹ سامنے آنے لگ گئے تھے، ایسے جھوٹ بھی سامنے آئے ہیں کہ وہ مجھے کہیں کا بتا کر کہیں اور چلی جایا کرتی تھیں۔

محسن عباس نے مزید کہا کہ فاطمہ سہیل کے والد بھی اس بات کے گواہ ہیں اور وہ اپنی بیٹی کا جھوٹ پکڑے جانے پر مجھے کہتے تھے کہ بیٹا ایک گناہ تو خدا بھی معاف کر دیتا ہے۔ وہ بولے کہ فاطمہ کو غلط بیانی کرنے اور جھوٹ بولنے کی عادت تھی اور میں نے کبھی اپنی ذاتی زندگی کو میڈیا پر نہیں اچھالا مگر ان کی طرف سے اکثر یہ حرکتیں ہوتی رہتی تھیں۔

معروف اداکار و گلوکار نے کہا کہ 4 سال کی شادی میں ہم میاں بیوی صرف ایک سال ہی ساتھ رہے ہیں اور اب ہم نے تقریباً 6 ماہ سے علیحدگی اختیار کی ہوئی ہے۔

پیسے مانگنے سے متعلق ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ فاطمہ نے الزام لگایا کہ میں نےان کے والد سے انہیں ایک کروڑ روپے لانے کی دھمکی دی، میں نے آج تک کاروبار ہی نہیں کیا تو کاروبار کے لیے پیسے کیوں مانگوں گا؟ اگر انہوں نے مجھے 50 لاکھ روپے دیے تھے تو اس کا کوئی تو ثبوت ہوگا-

اپنے اوپر الزامات کی صفائی میں محسن عباس کا کہنا تھا کہ فاطمہ نے جو تصاویر شیئر کی ہیں وہ 2018 کی ہیں اور یہ تصاویر سیڑھیوں سے پھسل کر گرنے کے بعد کی ہیں، جس تھانے میں انہوں نے درخواست دی ہے وہ تھانہ ان کو بلا رہا ہے لیکن وہ وہاں پیش نہیں ہورہیں جبکہ میں تھانے سے ہوکر آرہا ہوں اور اپنا بیان ریکارڈ کرالیا ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ اداکار کی اہلیہ فاطمہ نے سوشل میڈیا پر اپنی پوسٹ میں کہا کہ زبانی اور جسمانی تشدد بہت سہہ لیا، طلاق کی دھمکیاں بھی بہت برداشت کر لیں، سچ بتا دیا، ثبوت بھی پیش کر دیئے، اب محسن عباس سے عدالت میں ملاقات ہوگی۔

About Author

Comment here

Subscribers
Followers