قومی

نواز شریف کے سابق مشیر عرفان صدیقی بھی گرفتار

کرایہ دار ایکٹ کی خلاف ورزی کرنا عرفان صدیقی کو مہنگا پڑ گیا، پولیس نے گرفتار کر کے تھانے منتقل کر دیا- سابق وزیراعظم نواز شریف کے مشیر کی رہائی کی درخواست عدالت نے مسترد کر دی، 14 روزہ جوڈیشیل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا-

گزشتہ روز رات گئے عرفان صدیقی کو کرایہ داری ایکٹ کی خلاف ورزی پر گرفتار کر کے اسلام آباد کے تھانہ رمنا منتقل کیا گیا۔ پولیس ذرائع کے مطابق عرفان صدیقی نے گھر کرائے پر دے رکھا تھا، انہوں نے کرایہ داری ایکٹ پر عمل درآمد نہ کیا اور نہ ہی پولیس اسٹیشن میں اس کا اندراج کروایا۔

اس کے علاوہ عرفان صدیقی کے ساتھ اقبال نامی شخص کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔ عرفان صدیقی کو گرفتار کر کے سیکشن 188 کے تحت مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ مذکورہ سیکشن قابل ضمانت ہے تاہم اس کی ضمانت عمومی طور پر اسسٹنٹ کمشنر ہی لیتا ہے۔

آج پولیس کی جانب سے عرفان صدیقی کو مجسٹریٹ مہرین بلوچ کی عدالت میں پیش کیا گیا اور پولیس نے ان کے جوڈیشل ریمانڈ کی استدعا کی۔ اس کے جواب میں عرفان صدیقی کے وکیل نے عدالت سے پولیس کی جوڈیشل ریمانڈ کی درخواست مسترد کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے انہیں ضمانت پر بری کرنے کی استدعا کی۔ عدالت نے عرفان صدیقی کے وکیل کی استدعا مسترد کر دی اور سابق وزیراعظم کے معاون خصوصی کو 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر اڈیالہ جیل بھیج دیا گیا۔

عرفان صدیقی کی گرفتاری پر مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگزیب نے شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ عرفان صدیقی کو نواز شریف کا ساتھی ہونے کی سزا دی جا رہی ہے- انہوں نے وزیراعظم عمران خان سے مخاطب ہو کر کہا کہ اگر نواز شریف سے تعلق کی بنیاد پر ہی سب کو سزا دینی ہے تو کڑوڑوں لوگوں کو جیل میں ڈال دیں- انہوں نے مزید کہا کہ عرفان صدیقی کی گرفتاری نے بھینس چوری مقدمے کی یاد تازہ کر دی، ایک صاحب علم، استاد، قلم سے جڑے شخص کی گرفتاری ثبوت ہے کہ عمران خان صاحب انتقام لے رہے ہیں۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers