قومی

حمزہ شہباز 9 اگست تک نیب کے حوالے

رمضان شوگر ملز کیس میں احتساب عدالت لاہور نے حمزہ شہباز کا 9 اگست تک جوڈیشل ریمانڈ دے دیا، شہباز شریف پیش نہ ہوئے خاضری سے استثنی مانگ لی-
لاہور کی احتساب عدالت میں رمضان شوگر ملز کیس کی سماعت جج وسیم اختر نے کی- جج نے حمزہ شہباز سے پوچھا کہ کیا اپ کچھ کہنا چاہتے ہیں؟ جس پر حمزہ شہباز نے جواب دیا کہ میں ایک عام آدمی ہوں لیکن نیب کی نظروں میں بہت برا گنہگار ہوں، نیب سے کہوں گا کہ میری کرپشن ثابت کریں، نیب قیامت تک کرپشن ثابت نہیں کر سکتا، جس دن کرپشن ثابت ہو گئی میں عدالت اور پوری قوم سے معافی مانگ لوں گا۔
جبکہ دوسری جانب حمزہ شہباز کے والد شہباز شریف نے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کر دی۔ درخواست میں موقف اپنایا گیا کہ شہباز شریف سینیٹ الیکشن میں مصروف ہیں، شہبازشریف آج عدالت میں پیش نہیں ہوسکتے۔ عدالت نے ان کی درخواست قبول کر لی-
عدالت نے حمزہ شہباز کےجوڈیشل ریمانڈ میں 9 اگست تک توسیع کردی- اس کے بعد حمزہ شہباز نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آج اپوزیشن کا چیرمین سینیٹ منتخب ہو جائے گا، حکومت نے عوام کی زندگی اجیرن بنا دی ہے، ابھی پٹرول مہنگا ہو گیا ہے تو روٹی کیسے سستی ہو گی، پوری اپوزیشن کو گرفتار کر لیں گے پھر بھی ان سے حکومت نہیں چلے گی، ان کے جھوٹ انہی کے گلے میں پھندا بنیں گے۔
آپ کو بتاتے چلین کہ رمضان شوگرملزریفرنس میں شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو نامزد کیا گیا ہے۔ ریفرنس میں کہا گیا تھا کہ ملزمان نے رمضان شوگرملز کے لئے 10 کلو میٹر طویل نالہ بنوایا، شہبازشریف نے بطور وزیراعلیٰ اختیارات کا ناجائزاستعمال کیا اور اپنے خاندان کی مل کو فائدہ پہنچانے کے لئے عوامی مفاد کا نام لیا۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers