بین الاقوامیقومی

بھارت پاکستان کے خلاف آبی جارحیت پر اتر آیا

بھارت پاکستان کا صبر آزمانے کے لیے ہر حربہ آزمانے لگا۔ سرحدی دہشتگردی کے بعد اب آبی جارحیت۔ دیا سندھ اور ستلج میں بغیر اطلاع کے پانی چھوڑ دیا۔ قصور کے قریب گنڈاسنگھ میں دیہاتی ریلے سے کئی دیہات زیرآب سیکڑوں ایکڑ پر فصلیں تباہ۔ ضلعی انتظامیہ نے فوج بلا لی۔ دریائے ستلج میں بہاولنگر کے مقام پر پانی کی سطح میں اضافہ دریائے سندھ کا پانی دادو کے 40 دیہات میں داخل۔

بھارت نے سرکاری سطح پر اطلاع دیے بغیر لداخ ڈیم کے سپل ویز کھول دئیے۔ این ڈی ایم اے کے ترجمان نے کہا ہے کہ بھارت نے سرکاری سطح پر اطلاع دئیے بغیر لداخ ڈیم کے پانچ میں سے تین سپل ویز کھولے ہیں۔ یہ پانی خرمنگ کے مقام پر دریائے سندھ میں داخل ہوگیا ہے۔ گلگت بلتستان ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی اور دریائے سندھ کے اطراف تمام اضلاع کی انتظامیہ کو ریڈ الرٹ جاری کر دیا گیا ہے۔

بھارت کی جانب سے دریائے جہلم میں بھی پانی چھوڑا جارہا ہے۔ مظفرآباد میں آزاد کشمیر کی انتظامیہ نے اس سلسلے میں الرٹ جاری کردیا ہے۔ کل بھارت نے آبی دہشت گردی کرتے ہوئے دریائے چناب میں پانی چھوڑ دیا تھا۔ جس کے باعث دریائے چناب میں بھی درمیانے درجے کا سیلاب آیا۔ اس کے علاوہ ہیڈ مرالہ کے مقام پر بھی پانی کی آمد میں ایک لاکھ کیوسک اضافہ ہوا ہے۔

پاکستان میں اضافی پانی چھوڑے جانے سے پانی کی سطح ساڑھے چودہ فٹ ہوگئی ہے۔ جبکہ اٹاری، جمال کوٹ، سلیمانکی میں سیلاب سے بچاؤ کے کیمپ قائم کردیئے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کیلئے انتظامیہ کو تیار رہنے کی ہدایت کردی
۔
گنڈا سنگھ والا کے مقام پر پانی کا بہاؤ صبح گیارہ بجے سے بڑھنا شروع ہو گیا۔ راجن پور میں کوٹ مٹھن کے مقام پر چار لاکھ چالیس ہزار کیوسک کا سیلابی ریلا گزر رہا ہے۔ راجن پور میں سیلاب کے باعث کچے کے علاقے میں درجنوں بستیاں زیر آب اور سیکڑوں ایکڑ کپاس کی تیار فصل کو بھی نقصان پہنچا۔

نارووال کے نالہ ڈیک میں درمیانے درجے کا سیلاب جبکہ ہیڈ مرالہ کے مقام پر دریائے چناب میں نچلے درجے کا سیلاب ہے۔ سندھ کے دیہاتی علاقوں میں پانی کے بہاؤ میں مسلسل اضافے سے قریبی آبادیوں کا شہر سے زمینی رابطہ منقطع ہوگیا۔

آپ کو مزید بتاتے چلیں کہ مون سون بارشوں کا آخری سپیل جاری ہے۔ جس کی وجہ سے جنوبی پنجاب میں سیلاب کا خطرہ ہے۔ لاہور میں موسلادھار بارشوں کی وجہ سے دریائے راوی میں پانی کی سطح بلند ہو گئی ہے جس کے باعث ہائی الرٹ جاری کر دیا گیا۔ اس کے ساتھ ساتھ دریائے راوی میں پانی کی سطح بلند ہونے سے آس پاس کے علاقوں اور راوی کنارے جھگیوں میں جانی ومالی نقصان کا خطرہ برقرار ہے۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers