قومی

دریائے ستلج بپھرنے سے سیلابی ریلا زور پکڑنے لگا

سیلاب کا پانی زور پکڑنے لگا، دریا بپھر گئے۔ ستلج میں سیلاب سے قصور کے 18 سے زائد دیہات پانی پانی۔ سینکڑوں افراد محفوظ مقام پر منتقل۔ فصلیں تباہ ہو گئیں۔ سیلابی ریلا گنڈا سنگھ سے ہوتا ہوا کنگن پور پہنچ گیا۔

این ڈی ایم اے کے مطابق دریائے ستلج میں پانی کا بہاؤ مسلسل بڑھ رہا ہے۔ دریا کے اطراف قصور میں 18 سے زائد دیہات زیر آب آ گئے ہیں۔ 3 انتہائی متاثرہ دیہاتوں کو 90 فی صد تک خالی کروا دیا گیا ہے۔ جبکہ سینکڑوں افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کر دیا گیا ہے۔

پانی کے بہاؤ میں مسلسل اضافے کے باعث قریبی بستیاں زیر آب آگئیں جس سے فصلوں کو نقصان پہنچا، مویشی بھی ہلاک ہوئے۔ این ڈی ایم اے کے مطابق ڈیڑھ لاکھ کیوسک کا ریلا آج گنڈا سنگھ والا ہیڈ ورکس سے گزرے گا۔ سیلابی ریلا 23 اگست کو سلیمانکی ہیڈ ورکس پر پہنچے گا۔ گزشتہ رات 10 بجے گنڈا سنگھ والا پر پانی کا لیول 18.70 فٹ، بہاؤ 52000 کیوسک رہا تھا۔

خراب صورتحال کے پیش نظر لوگ اپنا گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہیں۔ جبکہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں میں امدادی کارروائیاں جاری ہیں۔ سیلاب کے باعث ہیڈ گنڈا سنگھ کا رابطہ دیگر علاقوں سے منقطع ہو چکا ہے۔ جبکہ زرعی اراضی زیر آب آ گئی ہیں۔

1500 متاثرین محفوظ مقام پر منتقل کر دیے گئے ہیں۔ ان تمام ہنگامی حالات سے نمٹنے کے لیے پاک فوج کے دستوں نے ذمہ داریاں سنبھال لیں ہیں۔ جبکہ پی ڈی ایم اے پنجاب، متعلقہ ضلعی انتظامیہ، اور دیگر ادارے بھی ہائی الرٹ کر دیے گئے ہیں۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ کچھ روز پہلے بھارت نے دریائےستلج میں پانی چھوڑ دیا تھا جس نے سیلابی ریلے کی شکل اختیار کر لی ہے۔ ملک کے دوسرے بڑے دریا ستلج سے اِس وقت ایک لاکھ 20 ہزار کیوسک سے زائد کا سیلابی ریلا گزر رہا ہے۔

بھارت کی طرف سے چھوڑے جانے والے اس سیلابی ریلے کے باعث بھکی ونڈ، گاؤں چندا سنگھ، ملندرہ اور گاؤں کائے نو سمیت درجنوں دیہاتوں کے ساتھ ساتھ ہزاروں ایکڑ رقبے پر کھڑی فصلیں زیر آب آگئی ہیں۔

جبکہ دوسری جانب اٹارنی جنرل انور منصور کہتے ہیں کہ بھارت کی اس آبی جارحیت پر پاکستان نے ورلڈ بینک جانے کا فیصلہ کیا ہے۔ پاکستان نے تیاری شروع کر دی ہے۔ بہت جلد ایکشن لیا جائے گا۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers