بین الاقوامی

چئیرمین سینیٹ نے یو۔اے۔ای کا دورہ احتجاجاً منسوخ کر دیا

ہٹلر مودی کو ان حالات میں اعلی سول ایوارڈ کیوں دیا گیا؟ کشمیر کی صورتحال کے پس منظر پر چئیرمین سینیٹ اور پالیمانی وفد نے متحدہ عرب امارات کا دورہ احتجاجاً منسوخ کر دیا۔ صادق سنجرانی نے اپنے فیصلے سے یو۔اے۔ای کے سفیر کو آگاہ کر دیا۔ کہا کہ مودی کشمیر میں ظلم و بربریت میں ملوث ہے۔ دورہ کشمیری عوام کی دل آزاری کا سبب بنے گا۔

سینیٹ سیکٹریٹ کی جانب سے جاری کردہ اعلامیے کے مطابق چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی جانب سے پارلیمانی وفد کا متحدہ عرب امارات کا دورہ بھارتی وزیراعظم کے دورے اور انہیں اعلیٰ ترین سول اعزاز دینے کے باعث منسوخ کر دیا گيا ہے۔

جاری کردہ اعلامیے کے مطابق صادق سنجرانی نے کہا ہے کہ پاکستان کشمیریوں کی آذادی کے حوالے سے جدوجہد کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔ مودی حکومت کشمیری مسلمانوں پر ظلم و بربریت ڈھا رہی ہے اور قابض مودی سرکار نے مقبوضہ وادی میں کرفیو نافذ کررکھا ہے۔ ایسے حالات میں متحدہ عرب امارات کا دورہ کشمیریوں کی دل آزاری کا سبب بنے گا۔ اپنے فیصلے سے چئیرمین سینیٹ نے ، متحدہ عرب امارات کے سفیر کو آگاہ کر دیا ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ ہفتے کے دن متحدہ عرب امارات کی حکومت نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کو اپنے سب سے بڑے سول اعزاز سے نوازا ہے۔ متحدہ عرب امارات کے شیخ محمد بن زید النہیان نے نریندر مودی سے ملاقات کی تھی اور انہیں امارات کا اعلیٰ ترین سول ایوارڈ (آرڈر آف زاید) سے نوازا تھا جب کہ ذرائع کے مطابق اس دوران انہوں نے نریندر مودی سے یہ بھی کہا تھا کہ آپ اس ایوارڈ کے حقدار ہیں۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ اعلیٰ سول ایوارڈ ملنے پر بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے متحدہ عرب امارات کی حکومت کا شکریہ ادا کیا تھا۔ اور کہا تھا کہ یہ اعزاز اپنی 130 کڑور عوام کے نام کرتے ہوئے یہ کہا تھا کہ یہ ایوارڈ بھارت کے تہذیب و تمدن کے لیے ہے۔

https://bit.ly/2PcsrxG

آپ کو مزید بتاتے چلیں کہ 5 اگست کو راجیہ سبھا میں کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کا بل پیش کرنے سے پہلے ہی صدارتی حکم نامے کے ذریعے کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کردی تھی اور ساتھ ساتھ مقبوضہ کشمیر کو اپنی وفاقی حکومت کے زیرِ انتظام دو حصوں میں تقسیم کردیا تھا۔

اس کے علاوہ بھی راجیہ سبھا میں بل کے حق میں 125 جبکہ مخالفت میں 61 ووٹ آئے تھے۔ بھارت نے 6 اگست کو لوک سبھا سے بھی دونوں بل بھاری اکثریت کے ساتھ منظور کرالیے تھے۔ اس سفاکانہ اقدام پہ دنیا بھر کے لوگوں نے تشویش کا اظہار کیا ہے۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers