قومی

مصطفٰی کمال کی معطلی سندھ ہائی کورٹ میں چیلنج

کراچی کے موجودہ اور سابق میئر کی لڑائی قانونی جنگ میں بدل گئی۔ مصطفٰی کمال کی پراجیکٹ ڈائریکٹر گاربیج کے عہدے سے معطلی سندھ ہائی کورٹ میں چیلنج۔ درخواست گزار کی وسیم اختر کی طرف سے جاری نوٹیفیکیشن معطل کرنے کی استدعا۔

پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفیٰ کمال کی پراجیکٹ ڈائریکٹرگاربیج کی حیثیت سے معطلی کیخلاف سندھ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی گئی۔ درخواست میں مصطفٰی کمال اور سیکرٹری بلدیات کو فریق بنایا گیا ہے۔

میئرکراچی کے معطلی کے نوٹیفکیشن کیخلاف درخواست محمد اقبال کاظمی نامی شخص نے دائرکی۔ درخواست میں مؤقف دائر کیا گیا کہ نہ قانونی تقاضے پورے ہوئے اورنہ ہی ضابطے کے مطابق شوکاز نوٹس جاری ہوا۔ 26 اگست کو میئر وسیم اختر نے خود سابق میئر مصطفی کمال کو ڈائریکٹر تعینات کیا تھا۔ لیکن اگلے ہی دن مصطفٰی کمال کو غیرقانونی طریقے سے معطل کردیا گیا۔

درخواست گزار کا مؤقف تھا کہ شہر میں بارشوں کی وجہ سے ابتر صورتحال پیدا ہوئی اور شہر پانی میں ڈوب گیا۔ مئیر کراچی اور محکمہ بلدیات کی نااہلی کے باعث شہر کی صورتحال انتہائی خراب ہو چکی ہے۔ میئر وسیم اختر اومحکمہ بلدیات سندھ فرائض نبھانے میں ناکام رہے۔

درخواست گزار نے گزارش کی کہ مصطفٰی کمال کی معطلی کا نوٹیفیکیشن غیرقانونی قرار دے کر 3 ماہ میں انہیں صفائی کا موقع دیا جائے۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ میئرکراچی وسیم اختر نے گزشتہ روز پاک سر زمین پارٹی کے سربراہ مصطفٰی کمال کو پراجیکٹ ڈائریکٹر کی پوسٹ سے معطل کردیا تھا اور معطل کرنے کی وجہ بتاتے ہوئے کہا تھا کہ مصطفیٰ کمال کے رویے اور بدتمیزی کی وجہ سے انہیں معطل کیا ہے۔ انھوں نے میری مخلصی کاغلط فائدہ اٹھایا اوراپنی سیاست چمکانا شروع کردی۔

اس سے پہلے وسیم اختر ہی نے مصطفٰی کمال کو 3 ماہ میں کراچی صاف کرنے کا چیلنج کیا تھا جو کہ انہوں قبول کر لیا تھا۔ وسیم اختر کی ہدایت پر ہی ان کو پراجیکٹ ڈائریکٹر گاربیج کی پوسٹ پر تعینات کیا گیا تھا۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers