قومی

آصف علی زرداری اڈیالہ جیل سے پمز ہسپتال منتقل

سابق صدر آصف علی زرداری طبیعت ناسازی پر پمز ہسپتال منتقل۔ آج ٹیسٹ کیے جائیں گے۔ انتظامات مکمل۔ سیکیورٹی سخت کر دی گئی۔ کارڈیک سنٹر کو سب جیل قرار دیے جانے کا امکان۔

شریک چئیرمین پاکستان پیپلز پارٹی اور سابق صدر آصف علی زرداری کو میڈیکل بورڈ کی سفارش پر پمز ہسپتال میں شعبہ امراض قلب میں داخل کر دیا گیا ہے۔

سخت سیکیورٹی کی وجہ سے آصف علی زرداری کو بکتر بند گاڑی میں پمز کے دوسرے دروازے سے کارڈیک سنٹر میں لایا گیا۔ ان کے ڈاکٹر وسیم خواجہ کے مطابق آصف زرداری کا پمز اسپتال میں معائنہ کیا گیا جہاں تین رکنی بورڈ نے ان کا میڈیکل چیک اپ کیا۔ زرائع کے مطابق سابق صدر کو پہلے سے ہی دل، کمر اور مہروں کے امراض لاحق ہیں۔

 

پمز ہسپتال کا چار رکنی میڈیکل بورڈ امراض قلب کے سنٹر میں سابق صدر کا طبی معائنہ کرے گا۔ آصف زرداری کو کمر کا بھی شدید درد لاحق ہے جس کے باعث ان کی فزیو تھراپی بھی کی جائے گی۔ ان کی فزیو تھراپی کے لیے خصوصی مہنگی مشین منگوائی جانے کا امکان ہے۔

 

ہسپتال میں سخت قسم کی وی آئی پی سیکیورٹی نافذ کر دی گئی ہے۔ کارڈیک سنٹر اور وارڈ کو سب جیل قرار دیے جانے کا بھی امکان ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ سابق صدر کے میڈیکل بورڈ نے گزشتہ ہفتے انہیں ہسپتال منتقل کرنے کی سفارش کی تھی۔ پیپلز پارٹی کی جانب سے بلاول بھٹو، شیری رحمان اور دیگر کی جانب سے انہیں ہسپتال بھیجنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ زرائع کے مطابق وزارت داخلہ کو میڈیکل بورڈ کی سفارشات بھی بھجوائی گئیں تھیں۔

 

پیپلز پارٹی کے شریک چئیرمین بلاول بھٹو زرداری نے اپنے ٹویٹر پیغام میں کہا تھا کہ میرے والد جو کہ بغیر کسی جرم کے جیل میں قید ہیں ان کو ڈاکٹرز نے ہسپتال منتقل کرنے کی ایڈوائس دی ہے لیکن حکومت ڈاکٹرز کی اسپتال منتقل کرنے کی ہدایات کو نہیں مان رہی۔

 

سابق صدر آصف علی زرداری جعلی بینک اکاؤنٹس کیس میں اڈیالہ جیل میں قید ہیں۔ گزشتہ سماعت پراحتساب عدالت نے آصف زرداری اوران کی ہمشیرہ فریال تالپور کے جوڈیشل ریمانڈ میں 5 ستمبر تک توسیع کی تھی۔

 

 

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers