قومی

پنجاب بھر کے تھانوں میں موبائل فون لے جانے پر پابندی

تھانوں میں پولیس کی جانب سے شہریوں پر تشدد اور لیڈی کانٹیبل کا ویڈیو بیان سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد آئی جی پنجاب کا انوکھا اقدام۔ تھانوں میں پولیس اہلکاروں کے موبائل فون استعمال کرنے پر پابندی لگا دی گئی۔ ایس۔ایچ۔او اور انچارج سے نچلے درجے کے اہلکار دوران ڈیوٹی موبائل فون استعمال نہیں کر سکیں گے اور نہ ہی ہو کوئی ویڈیو بنا سکیں گے۔

قانون کی خلاف ورزی کرنے والے افسر کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ آئی جی پنجاب کے حکم نامے کے مطابق پولیس کے عملے سمیت عام شہری بھی تھانے میں اسمارٹ فون اپنے پاس نہیں رکھیں گے اور نہ ہی لے جاسکیں گے۔ سائلین اور پولیس اسٹیشن کے عملے کو اپنے کیمرے والے فون ڈیسک پر جمع کرانا ہوں گے۔ ایس ایچ او اور محرر کو اس پابندی سے استثناء حاصل ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ آئے روز پنجاب پولیس کی جانب سے شہریوں پر تشدد کے واقعات میں اضافہ ہوتا چلا جا رہا ہے۔ آئے دن کوئی نہ کوئی تشدد کے واقعے کی وہڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے۔ ویدیو بننے سے روکنے کے لیے آئی جی پنجاب نے یہ قانون لاگو کیا ہے۔

سی پی او آفس کی جانب سے حکم نامہ پورے صوبے کے تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز کو بھجوا دیا گیا ہے۔ آئی جی پنجاب کی جانب سے جاری اس حکم نامے کو شہریوں نے شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے اور اسے پولیس کا ظلم چھپانے کے مترادف قرار دیا ہے۔

حکم نامے میں اہلکاروں کو یہ بھی ہدایت کی گئی ہے کہ کسی کو غیر قانونی طور پر تھانے میں حراست میں نہ رکھا جائے اور کسی پر بھی تشدد نہ کیا جائے۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers