قومی

گٹر باغیچہ سے محلوں تک کی کہانی

کراچی میں گٹر باغیچہ میں آنکھ کھولنے والی کی دولت دیکھ کھل آنکھیں کھل گئیں۔ لیاقت قائمخانی معمولی نوکر سے ڈی جی پارکس بنا پھرملک کا گلشن ہی اجاڑ دیا۔  پی سی ایچ ایس میں کروڑوں کا محل، ریموٹ کنٹرول دروازے، 2 مرلے پر محیط باتھ روم۔  ہیروں سے بھرے لاکرز، سونے کے بٹن ملے۔

 

 

جعلی اکاؤنٹس کیس میں مبینہ طور پر ملوث کے ایم سی کے سابق ڈی جی پارکس لیاقت  قائمخانی کے گھر نیب حکام کی جانب سے چھاپہ مارا گیا تھا

چھاپے کے دوران گھر میں کروڑوں روپے کی مالیت کی گاڑیاں سامنے آئیں ہیں۔ گاڑیوں میں مرسڈیز بینز،لینڈ کروزر، ہائی لکس ،فارچونر اور رینج روور بھی شامل ہیں۔

اس کے علاوہ جدید ترین اسلحہ بھی برآمد ہوا ہے۔ ذرائع کے مطابق لیاقت قائمخانی کے گھر سے کلُ 243 چیزیں برآمد ہوئی ہیں۔ گھر سے مہران ٹاؤن کے 20 پلاٹوں کی فائلیں بھی ملیں ہیں۔ چھاپے میں ڈالرز، ریال، درہم، سونے کے زیورات اور بانڈز بھی برآمد کئے گئے ہیں۔

ان کے گھر سے 4 بائی 6 فٹ کے 2 لاکر ز بھی پکڑے گئے ہیں جنہیں ابھی تک کھولا نہیں جاسکا ہے۔ لیاقت قائم خانی کے ذاتی سامان میں سے سونے کے بٹن اور کف لنکس بھی پائے گئے ہیں۔

نیب ذرائع کے مطابق اس گھر کے دروازے ریموٹ کنٹرول سے کھلتے ہیں اورگھر کے اندر باتھ روم 2 مرلے پرمحیط ہیں۔ نیب نے سابق ڈی جی پارکس پر الزام عائد کیا ہے کہ لیاقت علی نے تمام اثاثے کرپشن سے بنائے ہیں۔ ان کا رہن سہن ان کی آمدن سے مطابقت نہیں رکھتا۔ کرپشن سے بنائی گئی تمام اثاثوں کی تفصیلات قبضے میں لے لی گئیں ہیں۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ لیاقت قائمخانی سیاستدانوں کے چہیتے رہے ہیں۔ ہر دور میں انہوں نے خوب مال بنایا ہے۔ سابق صدر آصف زرداری نے انہیں بہترین کارکردگی پر ایوارڈ بھی دیا تھا۔ اس کے علاوہ تمام تر کالے کرتوتوں کے باوجود مئیر کراچی وسیم اختر نے بھی انہیں اپنا مشیر بنایا تھا۔

لیاقت قائم خانی پر بطور ڈی جی پارکس جعلی ٹھیکے دینے کا الزام ہے۔ ملزم باغ ابن قاسم کی غیر قانونی الاٹمنٹ کے مرکزی کردار بھی ہیں۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers