بین الاقوامی

نریندر مودی کشمیر میں ریاستی دہشت گردی کر رہا ہے: وزیراعظم عمران خان

وزیراعظم کشمیریوں کا مقدمہ لے کر امریکہ میں موجود۔ کہا کہ نریندر مودی کشمیر میں ریاستی دہشت گردی کر رہا ہے۔ اگر یہی 80 لاکھ یورپیین افراد کے ساتھ ہوتا تو کیا دنیا کا یہی رویہ ہوتا؟ آٹھ ملین چھوڑیں اٹھ امریکیوں کے ساتھ بھی ایسا ہوتا تو ایسی خاموشی نہ ہوتی۔

نیویارک میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی اقدام واپس لیے بغیر مودی سے ملاقات کا امکان نہیں۔ مودی مقبوضہ کشمیر میں ریاستی دہشتگردی کر رہا ہے۔ وہاں 80 لاکھ لوگ محصور ہیں اس سے بڑی اور ریاستی دہشتگردی اور کیا ہوگی۔

نیویارک: وزیراعظم عمران خان کی پریس کانفرنس#ImranKhan #PressConference #NewYork #OccupiedKashmir #AapNews

Posted by Aap News on Tuesday, September 24, 2019

 

 

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہم نے سب کو مودی کے جرائم بتائے مگر تجارتی فائدے کے لئے یہ ملک خاموش ہیں۔ اس سنگین بحران پر عالمی خاموشی مایوس کن ہے۔ اگر یہی 80 لاکھ یورپیین افراد کے ساتھ ہوتا تو کیا دنیا کا یہی رویہ ہوتا؟ آٹھ ملین چھوڑیں اٹھ امریکیوں کے ساتھ بھی ایسا ہوتا تو ایسی خاموشی نہ ہوتی۔

انہوں نے کہا کہ 9 لاکھ بھارتی فوجیوں نے 50 دن سے کشمیریوں کو یرغمال بناکر رکھا ہے۔ کشمیری عوام دنیا اور اپنے پیاروں سے کٹ چکے ہیں۔

کہا کہ ہم نہیں جانتے کہ کرفیو اٹھنے کے بعد کیا ہوگا لیکن ہمیں قتل عام کا خدشہ ہے۔ ہم نے معاملات کو معمول پر لانے کیلئے ہر ممکن کوشش کی مگر سیکیورٹی کونسل اپنے فیصلوں پر عمل درآمد نہیں کراسکی۔

مودی حکومت کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ بھارت میں انتہا پسندوں کی حکومت ہے۔ بی جے پی کی حکومت کشمير پر قبضہ کر کے کشمير ميں آبادی کا تناسب تبديل کرنا چاہتی ہے۔ بھارتی حکمران مسولینی اور ہٹلر کے نظریے پر چل رہے ہیں۔

بولے کہ یہی وقت ہے کہ دنیا اپنا کردار ادا کرے اس سے پہلے کہ بہت دیر ہو جائے۔ کیوبا بحران کے بعد یہ پہلی مرتبہ ہے کہ دو ایٹمی طاقتیں پاکستان اور بھارت آمنے سامنے ہیں۔

امریکہ ایران کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ایران کے مسئلے پر مزید بات نہیں کر سکتا اور ٹرمپ سے ملاقات کے بعد میں نے فوری طور پر صدر روحانی سے ملاقات کی۔

مودی حکومت مقبوضہ کشمیر کی جغرافیائی حیثیت کو بدلنا چاہتی ہے جو کہ جنیوا کنونشن کی خلاف وارزی ہے۔ کشمیرمیں اگر کچھ ہوا تو بھارت اس کا الزام پاکستان پر عائد کرے گا۔ جیسے پلوامہ حملے کا ذمےدار پاکستان کو ٹھہرایا گیا۔

پلوامہ واقعے کے بعد بھارتی عزائم کھل کرسامنے آگئے۔ ہم دونوں جوہری طاقتوں کے درمیان کشیدگی نہیں چاہتے تھے لیکن اس عمل کو ہماری کمزوری سمجھا گیا۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ عمران خان 27 ستمبر کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے۔ جس میں مقبوضہ وادی میں جاری بھارتی مظالم کو بیان اور فاشسٹ مودی کا اصل چہرہ بے نقاب کریں گے۔ مشن کشمیر کے حوالے سے عمران خان اقوام متحدہ میں کشمیریوں کا مقدمہ بھرپور طریقے سے لڑیں گے۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers