بین الاقوامی

پاکستان، ترکی اور ملائیشیاء کا مشترکہ اسلامک چینل شروع کرنے کا فیصلہ

پاکستان، ترکی اور ملائیشیاء کا اسلاموفوبیا کے مقابلے کے لیے مشترکہ انگریزی اسلامک چینل شروع کرنے کا فیصلہ۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مغرب والے نہیں جانتے کہ مسلمان پیغمبر اسلامﷺ سے کس قدر عقیدت رکھتے ہیں۔ رسول پاک ﷺ کی شان کی گستاخی پر ہر مسلمان کا دل دکھتا ہے۔

نیویارک : وزیر اعظم عمران خان کا نفرت انگیز گفتگو کے خلاف کانفرنس سے خطاب

نیویارک : وزیر اعظم عمران خان کا نفرت انگیز گفتگو کے خلاف کانفرنس سے خطاب #AapNews #BreakingNews #ImranKhan #USA #NewYork #IslamoPhobia #Religion #MuslimLeadership #Turkey

Posted by Aap News on Wednesday, September 25, 2019

 

سماجی رابطے کی ویبسائٹ ٹویٹر پر جاری کردہ اپنے ٹویٹ میں وزیراعظم کا کہنا تھا کہ آج ان کی رجب طیب اردوان اور مہاتیر محمد سے اہم ملاقات ہوئی ہے۔ ملاقات میں انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ مشترکہ طور پر ایک انگریزی چینل شروع کیا جائے گا۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ اس انگریزی چینل کو “اسلاموفوبیا” سے جنم لینے والے چیلنجز کے مقابلے اور ہمارے عظیم مذہب “اسلام” کے حقیقی تشخص کو اجاگر کرنے کیلئے مختص کیا جائے گا۔

وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ مشترکہ چینل پر مسلمانوں کی تاریخ پر پروگرام اور فلمیں پیش کی جائیں گی۔ اس شینل کے ذریعے وہ غلط فہمیاں اور منفی تصورات دور کرنے میں مدد ملے گی جو دوسرے مذاہب کے لوگوں کو مسلمانوں کے خلاف اکٹھا کرتے ہیں۔
لکھا کہ اس کے ذریعے توہین رسالت کے معاملے پر دنیا کو آگاہی دی جائے گی۔ اور مسلمانوں کے بارے میں غلط تاثرات بھی ٹھیک کیے جائیں گے۔

 

آپ کو بتاتے چلیں کہ وزیراعظم عمران خان کی نیویارک میں ملائشیا کے ہم منصب مہاتیر محمد سے اہم ملاقات ہوئی۔ جس میں مقبوضہ کشمیر، باہمی دلچسپی اور دیگر امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اور دونوں رہنماؤں نے پاکستان اور ملائشیا کے باہمی تعلقات بڑھانے پر بھی اتفاق کیا۔

اس کے علاوہ پاکستان اور ترکی کی مشترکہ میزبانی میں نفرت انگیز بیانات کے تدارک پر اجلاس ہوا۔ جس میں تقریر کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ذہب کا دہشت گردی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز بیانیے کا ازالہ کیا جانا ضروری ہے۔ بدقسمتی سے انتہا پسندی اور خودکش حملوں کو اسلام سے جوڑا گیا۔

اجلاس میں رجب طیب اردوان اور مہاتیر محمد اور عمران خان، تینوں رہنماؤں کی جانب سے خطے اور عالمی سطح پر رونما ہونے والے واقعات پر تبادلہ خیال کیا گیا اور مختلف شعبوں میں تعاون بڑھانے پر بات چیت کی گئی۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ عمران خان 27 ستمبر کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے۔ جس میں مقبوضہ وادی میں جاری بھارتی مظالم کو بیان اور فاشسٹ مودی کا اصل چہرہ بے نقاب کریں گے۔ مشن کشمیر کے حوالے سے عمران خان اقوام متحدہ میں کشمیریوں کا مقدمہ بھرپور طریقے سے لڑیں گے۔

Comment here

instagram default popup image round
Follow Me
502k 100k 3 month ago
Share