قومی

بلوچستان میں آج جے یو آئی(ف) کی شٹر ڈاؤن ہڑتال

چمن دہشتگردی واقعے میں جاں بحق جمیعت علمائے اسلام (ف)کے رہنماء مولانا محمد خنیف کی نماز جنازہ ادا کر دی گئی۔ صوبے بھر میں شٹر ڈاؤن ہرتال، سڑکوں پہ ٹریفک معمول سے کم۔

جمیعت علمائے اسلام (ف) کے رہنما مولانا محمد حنیف کی نماز جنازہ آج چمن میں ادا کر دی گئی۔ جمیعت علمائے اسلام (ف) کے رہنما مولانا محمد واصف، عثمان کاکڑ اوردیگر رہنماؤں نے بھی جنازے میں شرکت کی۔

جنازے میں چمن کے شہری بھی پھرپور تعداد میں شریک ہوئے۔ جس کے بعد شہید کو سپرد خاک کر دیا گیا۔

دوسری جانب مولانا فضل الرحمن نے اتوار کو بلوچستان بھر میں شٹرڈاؤن ہڑتال اور مظاہروں کا اعلان کر دیا۔ پرامن ہڑتال اور احتجاج کی ذمےداری پارٹی کی جانب سے صوبے کے تمام ضلعی ہیڈکواٹرز کو سونپی گئی ہے۔

جمیعت علمائے اسلام (ف) کے امیر مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ مولانا خنیف مجلس عاملہ کے اہم رکن اورجماعت کا قیمتی اثاثہ تھے۔ ہم دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ یہ واقعہ ملک میں امن کے خلاف گہری سازش ہے۔ اس کا دلی دکھ ہوا ہے۔

آج جمیعت علمائے اسلام (ف) کے امیر مولانا فضل الرحمان کی کال پر صوبے بھر میں شٹر ڈاون ہڑتال کی جارہی ہے جس کی وجہ سے تمام اہم تجارتی مراکز بند ہیں اور سڑکوں پر ٹریفک معمول سے بھی کم ہے۔ اتوار کا دن ہونے کی وجہ سے تعلیمی ادارے پہلے ہی بند ہیں جس کے سبب شہر میں مکمل ہڑتال کا سما ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ گزشتہ روز چمن میں تاج روڈ پر مولانا خنیف ایک دھماکے میں جاں بحق ہو گئے تھے۔

ذرائع کے مطابق دھماکا خیز مواد موٹرسائیکل میں نصب تھا جو مولانا محمد حنیف کے دفتر کے باہر کھڑی تھی۔ مولانا محمد حنیف کے دفتر سے باہر نکلتے ہی دھماکا ہو گیا۔

مولانا خنیف کو فوری ہسپتال منتقل کیا گیا تھا لیکن وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے۔ ان کے علاوہ 3 اور لوگ بھی اس دھماکے میں جاں بحق ہوئے تھے۔

پولیس ذرائع کے مطابق دھماکا اس قدر شدید تھا کہ متعدد گاڑیوں کے شیشے ٹوٹ گئے اور ایک گاڑی میں آگ بھی لگ گئی۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers