قومی

رانا ثناءاللہ اے این ایف حکام کو دھمکیاں دیتے ہیں: شہریار آفریدی

شہریار آفریدی کی رانا ثناءاللہ کو میکسکو کے ڈرگ لارڈ ایل چیپو سے تشبیہ۔ کہتے ہیں کہ اینٹی نارکوٹکس فورس نے سیاسی ڈرگ ڈیلر پر ہاتھ ڈالا۔ ادارے کا میڈیا ٹرائل ہو رہا ہے۔ رانا ثناءاللہ حکام کو دھمکیاں دیتے ہیں۔ گواہوں کے تحفظ کے لیے کیس لاہور سے راولپنڈی منتقل کیا جائے۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شہریار آفریدی کا کہنا تھا کہ رانا ثنا اے این ایف حکام کو دھمکیاں دے رہے ہیں۔ کیس سے جڑے گواہوں کی زندگیوں کو خطرات لاحق ہیں۔

گواہوں کے تحفظ کے لیے کیس راولپنڈی منتقل کیا جائے اور جیل میں روزانہ کی بنیاد پر ٹرائل کی اجازت دی جائے۔

انہوں نے کہا کہ رانا ثناء اللہ کو اے این ایف حکام نے ہیروئن سمیت گرفتار کیا۔ ثبوتوں میں برآمد ہیروئن، اسلحہ، رپورٹ اور2 درجن کے قریب گواہان ہیں۔ دفعہ 342 کے تحت ملزمان کے بیانات قلمبند کیے گئے۔

انہوں نے رانا ثناءاللہ کو میکسکو کے ڈرگ لارڈ ایل چیپو سے تشبیہ دیتے ہوئے کہا کہ میکسیکو کا ڈرگ ڈیلر لارڈ ایل چیپو ہے جبکہ پاکستان کا ڈرگ لارڈ رانا ثناءاللہ ہے۔

بولے کہ یہ ملک کا پہلا ٹرائل ہوگا جس میں ایک بھی گواہ طلب نہیں کیا گیا۔

رانا ثناء اللہ نے وکالت کو اپنا ذریعہ آمدن بتایا لیکن رانا ثناء اللہ کے پاس خریداری کے لیے اربوں روپے کہاں سے آئے انہوں نے اس کا جواب نہیں دیا۔ رانا ثناء اللہ اثاثے خریدتے رہے بیچے نہیں تو پیسے کہاں سے آئے۔

بولے کہ اے این ایف کسی ملزم کو خود سزا نہیں دے سکتی اور آئی جی پنجاب کیس کے گواہوں کو فوری تحفظ فراہم کریں۔

انہوں نے شکوہ کیا کہ اے این ایف جیسے ادارے کا میڈیا ٹرائل ہو رہا ہے۔ اے این ایف کا ٹرائل ہورہا ہے لیکن ملزم کا نہیں ہو رہا۔ اے این ایف اہلکاروں کو دی جانے والی دھمکیوں کا نوٹس لیا جائے۔

دنیا کی نظریں پاکستان اور پاکستان کے اداروں پر ہیں۔ اےاین ایف کی کارکردگی پر دنیا فخر کرتی ہے۔ رانا ثنااللہ کا کیس ہمارے لیے ٹیسٹ کیس ہے۔

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers