قومی

نواز شریف طبیعت ناسازی ہسپتال منتقل، علاج جاری

نواز شریف طبیعت ناسازی پر سروسز ہسپتال منتقل۔ وی آئی پی کمرہ سب جیل قرار دے دیا گیا۔ چیک اپ کے لیے 6 رکنی میڈیکل بورڈ قائم۔ نواز شریف کی طبیعت کراب ہونے کا سن کر نواز شریف نیب آفس پہنچے۔ انہیں ٹیسٹ کروانے کے لیے رازی کیا۔ ہسپتال بھی ساتھ گئے۔ اپوزیشن لیڈر کہتے ہیں کہ نواز شریف کو کچھ ہوا تو حکومت ذمےدار ہو گی۔

سابق وزیراعظم نوازشریف کو سروسزہسپتال کے وی آئی پی کمرے میں منتقل کر دیا گیا۔ نیب نے وی آئی پی کمرے کو سب جیل قرار دے دیا۔ ہسپتال میں پولیس کی بھاری نفری بھی تعینات کر دی گئی۔

ذرائع کے مطابق نواز شریف سے ڈاکٹرز کے علاوہ کسی کوملاقات کی اجازت نہیں دی جا رہی۔

نوازشریف کے علاج کے لیے 6 رکنی میڈیکل بورڈ تشکیل دے دیا گیا ہے جس نے ان کا معائنہ بھی شروع کردیا ہے۔ ابتدائی ٹیسٹ میں بھی یہ بات واضح ہو گئی ہے کہ نواز شریف کو ڈینگی بخار نہیں ہے۔

نواز شریف کی طبیعت خراب ہونے کا سن کر بھائی شہباز شریف فوراً نیب آفس پہنچے۔ انہوں نے بھائی سے بات کر کے انہیں ٹیسٹ کروانے کے لیے رضامند بھی کیا اور ساتھ ساتھ نیب حکام کے ساتھ ان کو لے کر سروسز ہسپتال بھی گئے۔

شہباز شریف نے نواز شریف کی صحت کے بارے میں ڈاکٹرز سے مشاورت بھی کی۔ بولے کہ نواز شریف کے کس طرح اچانک پلیٹلٹس کم ہو گئے؟  پلیٹلٹس کم ہونا اور اس کی اطلاع نہ دینا بدترین غفلت ہے۔ اگر نواز شریف کو کچھ ہوا تو حکومت ذمےدار ہو گی۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ گزشتہ رات نواز شریف کی طبیعت اچانک خراب ہو گئی تھی۔ ڈاکٹرز کی تجویز پر نواز شریف کو سروسز ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ان کا طبی معائنہ کیا گیا اور مختلف ٹیسٹ کیے گئے تھے۔ وزیراعظم نواز شریف چوہدری شوگر مل کیس میں نیب کی حراست میں تھے۔

نواز شریف کے ڈاکٹر کے مطابق ان کے خون میں پلیٹلیٹس کی تعداد صرف 16 ہزار رہ گئی ہے۔

 

Comment here

379,066Subscribers
8,414Followers