قومی

آٹے کی قیمت میں اضافہ، وزیراعظم عمران خان کا نوٹس

وزیراعظم نے آٹے کی قیمت میں اضافے کا نوٹس لے لیا۔ تین لاکھ ٹن گندم درآمد کرنے کا فیصلہ۔ نرخوں میں کمی کا ٹاسک جہانگیر ترین اور خسرو بختیار کے سپرد۔ 70 روپے کلو آٹا بیچنے والوں کے خلاف وزیرِ اعلیٰ پنجاب کا بھی ایکشن۔ فرائض میں غفلت برتنے اور بے ضابطگیوں میں ملوث محکمہ خوراک کے افسران کو معطل کر دیا۔

وزیراعظم عمران خان نے پورے ملک میں آٹے کی قیمت میں اضافے کا نوٹس لے لیا ہے۔ حکومت نے اس سال تین لاکھ ٹن گندم درآمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے اس معاملے پر دو رکنی کمیٹی تشکیل دے دی ہے۔ کمیٹی میں جہانگیر ترین اور وفاقی وزیر خسرو بختیار شامل ہیں۔ دو رکنی کمیٹی کو وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار اور وزیراعلیٰ کے پی محمود خان سے مشاورت کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

اس کے ساتھ ہی ساتھ وفاق نے پاسکو کے کوٹے سے کے پی کو 1 لاکھ ٹن گندم فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

دوسری جانب عثمان بزدار کے حکم پر محکمہ پنجاب نے کارروائی کرتے ہوئے 376 فلور ملوں کے خلاف کارروائیکی ہے۔ جس میں 9 کروڑ 6 لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا ہے جبکہ 15 فلور ملوں کے لائسنسز اور 180 فلور ملوں کا گندم کا کوٹہ بھی معطل کر دیا۔

اس کے علاوہ محکمہ خوراک نے فرائض سے غفلت برتنے پر 4 افسران کو بھی عہدے سے فارغ کر دیا ہے۔

ذرائع کے مطابق عہدے سے فارغ ہونے والے افسران میں ڈسٹرکٹ فوڈکنٹرولر گوجرانوالہ روحیل بٹ، ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر سیالکوٹ نصراللہ خان ندیم، ڈپٹی ڈائریکٹر محکمہ خوراک فیصل آباد کامران بشیر اور ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر وہاڑی صغیر احمد شامل ہیں۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ آٹے کی قیمت 64 روپے سے بڑھ کر70 روپے فی کلوہو گئی ہے۔ چکی مالکان نے نئی قیمتوں کا نوٹیفکیشن جاری کردیا جس کا اطلاق کل سے کیا جارہا ہے۔

قیمت بڑھنے سے متعلق آٹا چکی ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ حکومت نے چکی مالکان کو کوئی ریلیف نہیں دیا۔ حکومت اگر فلور ملز کی طرح سبسڈی دے گی تو قیمت کم کردیں گے۔

Comment here

instagram default popup image round
Follow Me
502k 100k 3 month ago
Share