بین الاقوامی

چین میں کرونا وائرس کی تباہی جاری

چین میں کرونا وائرس کی تباہی جاری ہے۔ 24 گھنٹوں میں مزید 38 شہری موت کے گھاٹ اتر گئے۔ جس کے بعد جان لیوا وائرس کا شکار ہونے والوں کی تعداد ایک سو ستر ہوگئی ہے۔ عالمی ادارہ صحت نے پوری دنیا میں اس خطرناک وائرس کی پھیلاؤ کی وارننگ دے دی۔

چین میں کرونا وائرس ایک ڈرونا خواب بن گیا۔ اب تک 170 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ متاثرین کی تعداد 7700 ہو گئی۔ وبا کے خوف سے شہری ایک دوسرے سے کترانے لگے ہیں۔ خطرناک مرض امریکا، جاپان، کینیڈا اور آسٹریلیا سمیت دنیا کے دیگر 16 ممالک میں بھی پہنچ چکا ہے۔

وبا سے نمٹنے کیلئےانٹرنیشنل ہیلتھ ریگولیشن کمیٹی کا ہنگامی اجلاس آج ہوگا۔ کرونا وائرس کا کوئی اسپیشل علاج نہیں اور نہ ہی اس کے لیے کوئی ویکسین ہے۔

ڈبلیوایچ او کےڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر ٹیڈروس ایڈہینم نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں کہا وائرس کیسے منتقل ہوا؟ اجلاس میں غورہوگا۔ کرونا وائرس کے چھ ہزار سے زائد کیسز چین میں رپورٹ ہوئے جبکہ 68 کیس دیگر15 ملکوں میں رپورٹ ہوئے۔

ذرائع کے مطابق کرونا وائرس کا پھيلاؤ روکنے کے ليے ووہان ميں روبوٹ استعمال کيے جارہے ہيں۔ شہرکے قريب ہزاربستروں کا اسپتال فعال کرديا گيا ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹویٹ کی کہ ان کی ایجنسیاں چین کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہیں، صورتحال کو مانیٹر کیا جارہا ہے۔
امریکہ نے فی الحال چین سے آئے امریکی شہریوں 3 دن کے لیے ائیرپورٹ سے باہر نکلنے پر پابندی عائد کر دی ہے۔

برطانیہ کی ائیرلائن برٹش ايئرويز نے بيجنگ اور شنگھائی کے ليے اپنی پروازيں معطل کردی ہيں جبکہ عالمی ادارہ صحت نے کرونا وائرس کو ہائی گلوبل رسک قرار دے ديا ہے۔

چین میں کرونا وائرس سے عوام میں شدید خوف و ہراس پایا جاتا ہے۔ ایسی ہی ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوگی ہے۔ جس میں ٹیکسی ڈرائیور نے ووہان شہرسے آنے والے شہری کو کھانسنے پر گاڑی سے اتار دیا۔

شہری نے ہسپتال جانے کے لئے ٹیکسی روکی تھی،شہری نے ڈرائیور سے چھپایا تھا کہ وہ ووہان شہر سے آیا ہے۔

instagram default popup image round
Follow Me
502k 100k 3 month ago
Share