Hijab Ban Hearing حجاب معاملے میں سُپریم کورٹ میں سماعت جاری

نئی دہلی: سُپریم کورٹ میں آج حجاب پر پابندی کے خلاف دائر عرضیوں پر سماعت جاری ہے۔ اس معاملے میں کل بھی سماعت ہوئی تھی جس میں مسلم فریق کے وکیل ایڈووکیٹ دشینت دوے نے کہا تھا کہ حجاب وقار کی علامت ہے۔ جس طرح ہندو خواتین اپنے سر کو ساڑھی سے ڈھانپتی ہیں اسی طرح اسلام میں حجاب ہے۔ Hijab Ban in Karnataka Educational institute

اس ساتھ ہی ایڈوکیٹ دشینت دیو نے دلیل دی تھی کہ ‘یہ اُس لباس کے بارے میں نہیں ہے، ہم فوجی اسکولوں یا نازی اسکولوں کے رجمنٹ کے بارے میں بات نہیں کررہے ہیں۔ ہم یہاں پری یونیورسٹی کالجوں کی بات کر رہے ہیں۔ آئین کھلے پن اور آزادی کی بات کرتا ہے جبکہ حکومتیں پابندیوں کی بات کرتی ہیں۔ یہاں بات صرف مساوات کی نہیں بلکہ ساتھ میں زندگی گزارنے پر بھی اٹھنے والے اعتراضات کا بھی ہے۔

انہوں نے نائیجیریا کی سُپریم کورٹ کے فیصلے کا حوالہ دیا تھا جس میں لاگوس کے سرکاری اسکولوں میں حجاب کے استعمال کی اجازت دی گئی تھی۔ حکومت کا حکم بالآخر اسکولوں پر چھوڑ دینا چاہیے۔ ان حالات میں امن عامہ کا کیا مسئلہ پیدا ہوتا ہے؟ لڑکیوں نے اسے صرف کسی نہ کسی بنیاد پر پہنا ہے اور کرناٹک ہائی کورٹ کے حکومت کے حکم کو نہ صرف مذہب کی آزادی، تعلیم کے حق کی خلاف ورزی کرتا ہے بلکہ آرٹیکل 15 کی بھی خلاف ورزی کرتا ہے، جو کہ امتیازی سلوک ہے۔ طالبات سے حجاب پہننے یا تعلیم جاری رکھنے کے حق کا انتخاب کرنے کے لیے کیسے کہا جا سکتا ہے؟ طالبات کو حجاب پہننے کی اجازت نہ دینے کا مطلب یہ بھی ہے کہ انہیں تعلیم کے بنیادی حق سے محروم کیا جا رہا ہے۔ آپ کو بتا دیں کہ جسٹس ہیمنت گپتا اور جسٹس سدھانشو دھولیا کی بنچ اس معاملے کی سماعت کر رہی ہے۔ Petition in Supreme Court Against Ban on Hijab

اس کے علاوہ ایک دیگر درخواست گزار کے وکیل نے دلیل دی کہ حجاب پر پابندی کے بعد 17000 طالبات نے اسکول چھوڑ دیا۔ درخواست گزار کی جانب سے حذیفہ احمدی نے دعویٰ کیا ہے کہ کرناٹک ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد سے 17000 طالبات نے اسکول چھوڑ دیا ہے۔ اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ یہ ڈراپ آؤٹ حجاب پر پابندی کے بعد ہوا ہے۔ Fundamental Right to Education

مسلم طالبات پر حجاب کی پابندی کا اثر، 17 ہزار طالبات نے اسکول چھوڑا: سماعت کے دوران جسٹس سدھانشو دھولیا نے حذیفہ احمدی سے پوچھا کہ ‘کیا آپ کے پاس کوئی نمبر ہے کہ حجاب پر پابندی کے بعد کتنی طالبات نے اسکول چھوڑا ہے؟ اس پر احمدی نے کہا کہ پی یو سی ایل کی رپورٹ کے مطابق 17 ہزار طالبات نے اسکول چھوڑ دیا اور وہ امتحان میں بھی نہیں بیٹھ سکیں۔ احمدی نے اس بات پر بھی زور دیا کہ ہائی کورٹ کے فیصلے کی وجہ سے بہت سی طالبات اسکولی تعلیم سے محروم ہو گئی ہیں۔ان اعداد و شمار کو رکھنے کے بعد حذیفہ احمدی نے کہا کہ ‘کسی کا حجاب پہننا دوسرے کے لیے کیسے غلط ہو سکتا ہے۔ ریاست کا کام تنوع کی حوصلہ افزائی کرنا ہے، طریقوں پر پابندی لگانا نہیں۔ کسی کو یہ کیوں محسوس ہونا چاہئے کہ کسی کی مذہبی رسومات سیکولر تعلیم یا اتحاد میں رکاوٹ ہیں؟ اگر کوئی حجاب پہن کر اسکول جاتا ہے تو کوئی دوسرا ناراض کیوں ہوگا؟ دوسرے طالب علم کو مسئلہ کیوں ہونا چاہئے؟

حذیفہ احمدی نے مزید کہا کہ اگر یہ آپ کو مشتعل کرتا ہے تو آپ کو اس کا ازالہ کرنا ہوگا۔ بصورت دیگر آپ کسی کو آپ کو دھمکانے کی اجازت دے رہے ہیں۔ حکومت شاید یہ چاہتی ہے کہ کیمپس میں ایسا ہو۔ یہ کہنا کہ میں کسی اور کا حجاب پہننا قبول نہیں کرتا۔ یہ آئین کے دیباچے میں بھائی چارے کے تصور کے برعکس ہے۔ قومی تعلیمی پالیسی میں اس خیال کو شامل کیا گیا ہے کہ اسکول تنوع اور تنقیدی سوچ کو قبول کرتے ہیں۔درخواست گزاروں میں سے ایک کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ آدتیہ سوندھی نے دلیل دی کہ کسی طالب علم کو صرف اس وجہ سے کلاس روم میں جانے کی اجازت نہ دینا کہ وہ حجاب پہنتی ہے آرٹیکل 15 کی خلاف ورزی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ریاست کسی کے ساتھ ذات، جنس، مذہب کی بنیاد پر امتیازی سلوک نہیں کرے گا۔

متعلقہ خبریں